لفظ ”پاکستان“ کے خالق چوہدری رحمت علی کا 118واں یوم پیدائش

Chaudhry Rehmat Ali, word " Pakistan " creator, Rehmat Ali 's 118 thاسلا م آ با د (تازہ ترین)لفظ ”پاکستان“ کے خالق چوہدری رحمت علی کا 118واں یوم پیدائش آ ج منایا جارہا ہے۔ اس سلسلے میں ملک بھر میں خصوصی تقریبات کا اہتمام کیا گیا ہے ۔چوہدری رحمت علی16 نومبر 1897ء میں ضلع ہوشیار پور (مشرقی پنجاب) کی تحصیل گڑھ شنکر کے ایک گاؤں موہراں میں پیدا ہوئے۔ والد کا نام حاجی  محمد تھا جو ایک معمولی زمیندار تھے۔ رواج کے مطابق ابتدائی تعلیم قران مجید کی حاصل کی ۔ اینلگو سنسکرت ہائی اسکول سے 1913 میں میٹرک کی سند حاصل کی۔ ایف اے اور بی اے بالترتیب 1915ء اور 1918 میں اسلامیہ کالج سے پاس کئے۔ 1925 تک آپ لاء کالج لاہور میں زیر تعلیم رہے جہاں سے آپ نے قانون کی ڈگری حاصل کی۔
چوہدری رحمت علی اسلامیہ کالج لاہور کے نامور طالب علم تھے۔ جنوری 1931 میں انھوں نے کیمبرج کے کالج ایمنویل میں شعبہ قانون میں اعلٰی تعلیم کے لئے داخلہ لیا۔ اسلامیہ کالج کے مجلے “دی کریسنٹ” کے ایڈیٹر اور اور کئی دیگر طلباء سے متعلق بزموں کے عہدیدار بھی رہے ۔ اسلامیہ کالج میں بزم شبلی قائم کی ، جس کے 1915ء کے اجلاس میں محض 18 برس کی عمر میں تقسیم ملک کا انقلاب آفرین نظریہ پیش کیا ، جس کی مخالفت پر آپ اس بزم سے الگ ہو گئے ۔ آپ نے یہ نظریہ پیش کرتے ہوئے فرمایا”ہندوستان کا شمالی منطقہ اسلامی علاقہ ہے ، ہم اسے اسلامی ریاست میں تبدیل کریں گے ، لیکن یہ اس وقت ہو سکتا ہے جب اس علاقے کے باشندے خود کو باقی ہندوستان سے منقطع کر لیں۔ اسلام اور خود ہمارے لئے بہتری اسی میں ہے کہ ہم ہندوستانیت سے جلد سے جلد جان چھڑا لیں”تحریک پاکستان کے رہنما چوہدری رحمت علی 16نومبر 1897 کو مشرقی پنجاب میں پیدا ہوئے ، انہوں نے اسسٹنٹ ایڈیٹر کی حیثیت سے اپنے کیرئیر کا آغاز کیا،انہوں نے لندن سے قانون اور سیاست میں اعلیٰ ڈگریاں حاصل کیں۔ چوہدری رحمت علی نے 1933میں گول میز کانفرنس کے دوران پہلی مرتبہ پاکستان کا نام استعمال کیا ،ا نہوں نے لندن کے شہر کیمبرج سے اپنا ایک اخبار بھی نکالا جس کا نام بھی پاکستان تھا۔

یام پاکستان کے بعد آپ دو بار پاکستان تشریف لائے مگر نامناسب حالات اور رویوں کے باعث آپ دلبرداشتہ ہو کر دوبارہ برطانیہ چلے گئے اسی دوران آپ کا 20 مئی 1948 کو پاکستان ٹائمز میں انٹرویو بھی شائع ہوا۔آپ کا آخری پتہ 114 ہیری ہٹن روڈ تھا اور آپ مسٹر ایم سی کرین کے کرائے دار تھے۔ مسٹر کرین کی بیوہ کے مطابق چوہدری رحمت علی اپنا خیال ٹھیک سے نہیں رکھتے تھے ۔ جنوری کے مہینے میں سخت سردی کے دوران ایک رات آپ ضرورت کے کپڑے پہنے بغیر باہر چلے گئے اور واپسی پر بیمار ہو گئے ۔ آپ کو ایولائن نرسنگ ہوم میں داخل کرایا گیا جہاں آپ کا ہفتے کی صبح انتقال ہوا۔

Leave a Reply