کھویا شہر مل گیا

تازہ ترین) امریکی محققین نے 10 سال کی تحقیق کے بعد حضرت لوط علیہ السلام کی قوم اور  ان کے شہر کے کھنڈرات ڈھونڈ نکالنے کا دعویٰ کیا ہے۔قوم لوط کے مرد اپنی جنسی خواہشات  کی تکمیل کے لیےruins عورتوں کے بجائے مردوں کی طرف غیر فطری میلان رکھتے تھے۔ اس پر اللہ پیغمبر حضرت لوط علیہ السلام نے اپنی قوم کو منع کیا اور اللہ کی طرف سے سخت عذاب کی وعید سنائی مگر ان کی قوم بشمول ان کی بیوی کے، سب نے ان کی بات ماننے سے انکار کردیا۔

قرآنِ پاک میں قوم طون کی غلط کاریو ں اور اس پر انھیں ملنے والی سزا کے بارے میں تفصیلی ذکر کیا گیا ہے  مگر کوئی بھی نہیں جانتا تھا کہ قوم لوط کا شہر کہا ں ہے۔ لیکن اب  امریکی ماہرینِ آثار قدیمہ کی ٹیم نے 10 سال کی محنت کے بعد دعویٰ کیا ہے کہ وہ سدوم  نامی شہر تک پہنچنے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔ تباہ شدہ شہر کے کھنڈرات سے پتا چلتا ہے کہ یہ ایک وسیع وعریض شہر تھا جس میں کئی قدیم عمارتوں کی موجودگی کا بھی پتا چلتا ہے۔ شہر کے کھنڈرات اردن میں تل الحمام کے مقام پر ملے ہیں۔

کھنڈرات دریافت کرنے والی ٹیم کے سربراہ ڈاکٹر اسٹیون کولنز کا کہنا ہے کہ جب ان کی تحقیقات کا نتیجہ سامنے آیا تو وہ خود بھی حیران رہ گئے کیونکہ اس شہر میں زندگی ایک دم ختم ہوچکی تھی۔  ان کے مطابق سدوم شہر دو حصوں میں منقسم دکھائی دیتا ہے۔ ایک بالائی اور دوسرا زیریں حصہ ۔ شہر کے گرد مِٹی کی اینٹوں کی 10 میٹر اونچی اور 5.2 میٹر چوٹی دیوار بھی دریافت ہوئی ہے۔ شہرکے دروازوں کی باقیات بھی ملی ہیں۔ ایسے لگتا ہے کہ جب یہ شہر تباہ ہوا تو اس وقت بھی لوگ روز مرہ کے معمولات میں مشغول تھے مگر زندگی اچانک ہی ختم ہوگئی ۔

Leave a Reply