مودی سرکارکی پالیسیوں پر کڑی تنقید کا سلسلہ جاری ہے،، نیو یارک ٹائمز

 تازہ ترین– بھارت میں بڑھتی انتہا پسندی ملکی معیشت کو تباہ کررہی ہے ،ہندوستان انتہا پسندی نے توپاکستان پرindia prime minister بھی برا اثر ڈالا ہے- اور اب  انتہا پسندی کی خبر امریکا تک جا پہنچی ہے- اگست میں ادیب گلبرگی کو ہندو ازم پر تنقید کرنے پر قتل کردیا گیا،ستمبر میں گائے کا گوشت کھانے کی وجہ سے ایک مسلمان کو مار ڈالا گیا،ان واقعات پر وزیر اعظم نریندرمودی نے تاخیر سے مذمت کی ہے-

اخبار نے اپنے اداریہ میں بھارت میں اقلیتوں پر مظالم کیخلاف بھارت کے ادیب، فنکار اور سائنسدانوں کے احتجاج کا بھی ذکر کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کا اکثریتی طبقہ یہ نہیں چاہتا جو ہو رہا ہے، یہ وہ بھارت نہیں جو بین الاقوامی سرمایہ کاروں کی توجہ حاصل کرے گا-

بھارتی حکومت کی پالیسیوں پر نیویارک ٹائمز نے “ہندو انتہا پسندی کی قیمت” کے عنوان سے اداریہ شائع کیا ہے۔مودی سرکارکی پالیسیوں پر کڑی تنقید کا سلسلہ جاری ہے،کیونکہ بھارت میں اقلیتوں پر مظالم کا سلسلہ تاحال جاری ہے ، جسے مدنظر رکھ کر امریکی اخبارنے اداریہ میں بھارت میں بڑھتی عدم رواداری اور عدم برداشت کا ذکرکیا اور لکھا کہ یہ حقیقت ہے کہ چند انتہا پسندوں کی نفرت اور مطالبات نے بھارت کو یرغمال بنا لیا ہے،بھارت میں عدم برداشت نے معاشی صورتحال پر برا اثر ڈالا ہے اور سرمایہ داری میں بھی فرق نظر آیا ہے۔

Leave a Reply