پاکستان ریلوے کی ایک اور نااہلی

تازہ ترین—پاکستان ریلوے کی ایک اور نااہلی اربوں روپے کا نقصان کر بیٹھے۔ پاکستان ریلوے کے حکام کی لاپرواہی پر اربوں روپےpakistan railway کا  نقصان   کا انکشاف ہوا ہے-  ریلوے اور پراکس میں ہونے والے معاہدے میں کرایوں میں نظرثانی کرنے اور ان میں اضافے کا کوئی ذکر نہیں تھا اور ہر سال معاہدے پر نظرثانی بھی کرنا تھی جو نہیں کی گئی۔ تفصیلات کےمطابق پاکستان ریلوے اور پراکس کے درمیان حویلیاں سے کراچی چلنے والی ہزارہ ایکسپریس اور روہی ایکسپریس کے حوالے سے معاہدہ ہوا تھا۔

معاہدے میں کہیں بھی کرایوں میں اضافے کا ذکر نہیں تھا اوراس کے ساتھ ساتھ یہ بھی طے پایا تھا کہ ہر سال معاہدے پر نظرثانی کی جائے گی مگر پراکس اور پاکستان ریلویز کے حکام نے معاہدے پر عملدرآمد نہیں کیا۔ دونوں اداروں کی جانب سے نہ ہی معاہدے پر ہر سال نظرثانی کی گئی اور نہ ریلوے نے کرایوں میں اضافہ کیا۔

دستاویزات کے مطابق 2007-08 کے دوران کرایے میں 15 فیصد، 2008-09 میں 8 فیصد، 2011-12 میں 15 فیصد اور 2012-13 میں بھی 15 فیصد اضافہ کیا گیا جو کہ دونوں اداروں کے درمیان معاہدے میں کہیں بھی نظر نہیں آیا۔ کرایوں کی وجہ سے ادارے کو ایک ارب 3 کروڑ 89 لاکھ روپے کا نقصان ہوا۔

Leave a Reply