آج قرۃالعین حیدر کی آٹھویں برسی منائی جارہی ہے

تازہ ترین) آج اردو کی نامور افسانہ نگار اور ناول نگار قرۃالعین حیدرکی برسی منائی جارہی ہے ۔ اردو کے افسانہ نگاروں میں قرۃالعین حیدر کا مقام بہت بلند Qurat ul aien haidarہے ۔ وہ مشہور انشاء پرداز سید سجاد ذحیدر کی صاحبزادی تھیں۔ ان کے افسانوں کا پہلا مجموعہ “ستاروں سے آگے ” تھا جسے جدید افسانوں کا نقطہء آغاز قرار دیا جاتا ہے ۔1947ء میں وہ پاکستان چلی آئیں جہاں وہ حکومت پاکستان کے شعبہ اطلاعات و فلم سے وابستہ ہو ئیں۔ یہاں ان کے کئی ناول شائع ہوئے جن میں میرے بھی صنم خانے ، سفینہ غم دل اور آگ کا دریا قابلِ ذکر ہیں۔  آگ کا دریا کی اشاعت پر پاکستانی پریس کی جانب سے آپ کو خاصی تنقید کا سامنا کرنا پڑا جس پر آپ واپس ہندوستان چلی گئیں۔

ہندوستان جا کر آپ کے کئی افسانے ، مجموعے ، ناولٹ اور ناول شائع ہوئے ۔ 1989ء میں حکومت ِ ہندوستان کی جانب سے آپ کو گیان پیٹھ ایوارڈ عطا کیا گیا جب کہ 2005ء میں پدم بھوشن سے اعزاز سے نوازا گیا۔

آپ نے 21  اگست 2007ء کو دہلی کے نزدیک نوئیڈا کے مقام پر  وفات پائی اور جامعہ ملیہ اسلامیہ کے قبرستان میں آسودہ خاک ہیں۔

Leave a Reply