روسی صدر کا ایرانی سپریم لیڈر کے ساتھ بڑا دھوکا۔۔۔

Russian president deceived irani supreme leader  

تازہ ترین) روس کے صدر ولادی میر پیوتن نے ایسا کام کیا جس کی کسی کو توقع نہیں تھی، انہوں نے اپنے  ایرانی دورے کے دوران ایران کے سپریم لیڈر کو قرآن پاک کا قدیم ترین تحفہ پیش کیاجسے ایران کی جانب سے دونوں ملکوں کے درمیان تاریخی تزویراتی تعلقات کا آئینہ دار قرار دیا گیا لیکن بعدازاں میڈیا نے پیوتن کے تحفے کی اصلیت کا بھانڈا پھوڑ کر یہ ثابت کردیا کہ آیت اللہ خامنہ ای کو دیا گیا قرآنی نسخہ اصل نہیں بلکہ اصل کی فوٹو کاپی ہے۔

اور یہ تصدیق کرنے کے بعد ہی کہا گیا ہے کہ یہ قرآن پاک کا نسخہ اصل نہیں ہے اور اس پر افسوس کا اظہار  کیا گیا ہے۔ماسکو یونیورسٹی میں قائم مڈل ایسٹ اسٹڈی سینٹر کے مطابق خامنہ کو بہ طور تحفہ دیے گئے جس قرآنی نسخے کے بارے میں ایرانی اور روسی ذرائع ابلاغ میں خوب ڈھنڈروا پیٹا گیا تھا اس کے بارے میں کہا جاتا ہے وہ بنو امیہ کے آخری خلیفہ مروان بن محمد بن مروان بن الحکم بن ابی العاص بن امیہ المعروف مروان الحمار کے دور میں تیار کیا گیا تھا جب کہ مروان بن الحکم کا سنہ پیدائش 70ھ اور وفات 132 بتایا جاتاہے۔

Leave a Reply