پاکستان سٹیل مل مالکان میٹرک پاس ہیں۔۔۔ چیئر مین نجکاری کمیشن

تازہ ترین—-وزیر مملکت و چیئرمین نجکاری کمیشن محمدزبیرنے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ پاکستان اسٹیل ملزsteel mil کو مجموعی طور پر 140 ارب روپے خسارے کا شکار ہے-،اسٹیل ملزکے ذمے سوئی گیس کے 35 ارب،ٹیکس،ڈیوٹیوں کی مدمیں 80 ارب اورنیشنل بینک کے50 ارب روپے واجب الاداہیں- جبکہ اسٹیل ملزکے 60فیصدافسران میٹرک پاس ہیں – ملزکی مجموعی اراضی 19 ہزارایکڑہے جبکہ سندھ حکومت کیساتھ  17سوایکڑاراضی کامعاملہ زیر بحث چل رہا ہے-،صوبائی حکومت کوملزکی خریداری کے لیے خط  ارسال کیا جا چکا ہے ۔ وزیرمملکت نےبتایا کہ پی آئی اے کومجموعی طور پر 226 ارب روپے کا خسارہ در پیش ہے -اور295ارب روپے پی آئی کے ذمے واجب الاداہیں- جبکہ پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائن صرف نیشنل بینک کی 63 ارب روپے کی قرض دار ہے،ان کا کہنا تھا کہ دنیا بھرمیں فی جہاز 135 افرادڈیوٹی کرتے ہیں- مگرپی آئی اے میں596 افراد ڈیوٹی کررہے ہیں،چیئرمین سلیم ایچ مانڈوی والانے کہاکہ نیشنل پاورکمپنی کی نجکاری میں شکوک وشبہات اپنی جگہ لے رہے ہیں- وزیرمملکت وچیئرمین نجکاری کمیشن محمدزبیرنے اس بات کا  انکشاف کیا ہے کہ پاکستان اسٹیل ملز کے 60 فیصدافسران انڈرمیٹرک پاس ہیں،سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ نے ہیوی الیکٹریکل کمپلیکس کی نجکاری میں فراڈ کا معاملہ نیب کودینے کے لیے ہدایت کرتے ہوئے تحقیقات کے لیے ذیلی کمیٹی بھی تشکیل دیدی۔ کمیٹی کا اجلاس سینیٹر سلیم ایچ مانڈوی والاکی زیرصدارت ہوا،- پاکستان میں 9سال کے دورانیے میں35ارب ڈالرکی اسمگلنگ ہوئی اور مالی سال 2014میں پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ سے 24ارب روپے کی اسمگلنگ ہوئی جبکہ،افعان ٹرانزٹ کے ذریعے جانیوالی اشیا بارڈکراس کرنے کے فوری بعدواپس لوٹ آتی ہے،چیئرمین ایف بی آرنے کہاکہ اس حوالے سے کچھ نہیں کہا جا سکتا،اسمگلنگ کی روک تھاام کیلے قدامات جاری ہیں،ستارفتح محمدنے کہنا ہے کہ ایرانی اسمگل پٹرول ملک بھرمیں استعمال کیا جا رہا ہے-یہ بلوچستان اور سمندرکے ذریعے بھی اسمگل ہوکرآتاہے،کمیٹی نے ایف بی آرکواسمگلنگ کی روک تھام کے حوالے سے پالیسی کو نئے سرے سے دیکھنے اورنئے لوگوں کوتعینات کرنیکی ہدایت بھی کی ہے-

Leave a Reply